چنے کی فصل میں کھادوں کا استعمال سال 18-2017


کھادوں کا استعمال:

چنے کی فصل کو نائٹروجنی کھاد کی کم ضرورت ہوتی ہے۔ کیونکہ یہ فصل اپنی نائٹروجنی کھاد کی ضرورت کافی حد تک خود پوری کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ جو جراثیم ٹیکہ لگانے سے مزید بڑھ جاتی ہے۔ البتہ فاسفورسی کھادکے استعمال سے دانے موٹے زیادہ تعداد میں بننے سے پیداوار میں اضافہ ہوتاہے۔ کھاد کے استعمال کے لئےکھیت میں وتر کا مناسب مقدار میں ہونا ضروری ہے۔ لٰہذا آبپاش علاقوں میں اس فصل کے لئے کھادیں دیئے گئے گوشوارہ کے مطابق استعمال کریں۔ کھاد بوائی سے قبل زمین تیار کرتے وقت ڈالنی چاہئے۔

گوشوارہ

کھاد (کلو گرام فی ایکڑ) تعداد بوری فی ایکڑ
نائٹروجن فاسفورس
13 34

ڈیڑھ بوری ڈی اے پی یا آدھی بوری یوریا + ڈیڑھ بوری ٹرپل سپرفاسٹ یا ایک بوری نائٹروجن+ایک بوری ٹرپل سپرفاسفیٹ 18 فیصد یا آدھی بوری یوریا + چار بوری سنگل سپر فاسفیٹ

  • بارانی علاقے جہاں مناسب وتر موجود ہو وہاں ایک بوری ڈی اے پی فی ایکڑ کاشت کرتے وقت استعمال کرنی چاہئے۔
  • جن بارانی علاقوں میں زمیندار کھاد استعمال نہیں کرتے انہیں چاہئے کہ وتر کی صورت میں ایک بوری ڈی اے پی ضرور ڈالیں۔
  • جن ریتلی بارانی علاقوں میں بوائی زمین کی تیاری کئے بغیر کی جاتی ہے۔ وہاں کھاد سیاڑوں کے ساتھ ڈرل کریں۔