پنجاب میں حالیہ بارشیں - گندم اور کپاس کی فصلوں پر اثرا ت


.پنجاب  میں حالیہ بارشوں اور  ژالا باری    یا  برف کے اولے گرنے سے گندم کی فصل کو بہت نقصان ہوا ہے

  سب سے زیادہ    ڈسٹرکٹ خانیوال ، ملتان ، راجن پور،  سائیوال، اور رحیم یار خان میں ہوا ہے۔ اس کے علاوہ بہاولپور  اور بہاول نگر  میں تقریباً دو سے تین فیصد نقصان ہوا ہے۔ملتان تحصیل اور  لار

..کی ایریا  میں

تقریباً 14 سے 15 ہزا ر ایکڑ  نقصان ہوا ہے ۔ بارشوں سے کپاس کے کاشت والے ایریا بھی  متاثر ہوئے ہے۔  جن کاشتکاروں نے کپاس کی بُوائی  کرلی  تھی ان کاشتکاروں کو دوبارہ   بُوائی کرنی  پڑی گی ۔

 موسم کی تبدیلی کے باعث  اس سا ل پنجاب میں کپاس کی کاشت MAY سے ہونے کا امکان ہے اگر دھوپ زیادہ نکلی تو ایک ہفتہ کے اند ر گندم کی کٹائی اور تھریشنگ  پوری ہوجائے گی ۔ ابھی تو دو دن سے ایسے کوئی بارش کی نیوز نہیں آئی ہے ۔ بارش کا دوسرا سپیل  21یا 22 اپریل میں ہونے کا امکان ہے ۔  خانیوال  تحصیل میں 4500 ایکڑ ایراضی پہ  کھڑی گندم کو نقصان ہوا ہے جس میں سب سے زیادہ  خانیوال تحصیل   اور جہانیاں  ، کبیر والا  میں کم نقصان ہوا ہے ۔

لور سندھ

لور سندھ میں کپاس کی کاشت نارملی چل رہی ہے   میں بدین ، عمرکوٹ ، تھرپارکر ، ٹنڈو محمد خان  شامل ہے  ، تقریبا ً 35 سے 40 فیصد ہوگئی ہے ۔ پانی کی صورتحال بھی بہت اچھی ہے مگر تھوڑی  ڈسٹریبیوشن کی پروبلم  آرہی ہے خاص  کر بدین میں ۔

   سینٹرل سندھ

حیدرآباد ، میرپور خاص، ٹنڈو الھیار ، مٹیاری ، سانگھڑ  میں کپاس کی کاشت     تقریباً   25 سے 30 فیصد  ہوچکی ہے ۔

اَپر سندھ

 اَپر سندھ میں  نوابشاہ ، نوشیروفیروز ، خیرپور ، سکھر ، اور گھوٹکی  میں تقریباً   20 سے 15 فیصد کاشت ہوچکی ہے ۔