کرشنگ سیزن اور گندم کی بوائی میں تاخیر کے باعث مختلف کھادوں کی فروخت میں نومبر کے دوران 32 فیصد کمی ہوئی


نومبر  2018ء کے دوران کھاد کی مجموعی فروخت میں 32 فیصد کی کمی واقع ہوئی ہے اور اس دوران 8 لاکھ 49 ہزار ٹن مختلف کھادیں فروخت کی گئی ہیں۔ ٹارس سکیورٹیز کے تجزیہ کار مصطفیٰ ضامن نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ گنے کے کرشنگ سیزن میں تاخیر کی وجہ سے گندم کی بوائی میں تاخیر اور قیمتوں میں اضافہ کے باعث کھادوں کی فروخت میں کمی ہوئی ہے۔ رپورٹ کے مطابق نومبر 2018ء کے دوران یوریا کھاد کی فروخت میں 17 فیصد کی کمی ہوئی اور فروخت کا حجم 4 لاکھ 97 ہزار ٹن تک کم ہو گیا جبکہ ڈی اے پی کھاد کی فروخت میں 47 فیصد کی نمایاں کمی سے فروخت 2 لاکھ 65 ہزار ٹن تک کم ہوئی ہے۔ ڈالر کے مقابلہ میں روپے کی قدر میں کمی اور ڈی اے پی کھاد پر دی جانے والی سبسڈی میں کمی کی وجہ سے قیمت میں اضافہ ہوا جس سے فروخت کم ہوئی۔