حکومت کا مجوزہ آٹا پیکیج قبول نہیں ، فلور ملز ایسوسی ایشن


فلور ملز کو سستی گندم دی جائے تو پورا سال آٹا ارزاں نرخوں پر ملے گا
حکومت سندھ رمضان المبارک میں آٹاپیکیج کے نام پر کرپشن کا بازار گرم کرنا چاہتی ہے ، اگر سندھ حکومت اتنی ہی سنجیدہ ہے تو وہ عام آدمی کو ریلیف دینے کیلئے مجوزہ پیکیج کے بجائے ستمبر تا فروری کے دوران فلور ملوں کو 1.50روپے فی کلو سستی قیمت پر گندم فراہم کرے تو پورے سا ل عوام کو سستا آٹا میسر آسکتا ہے ۔یہ بات پاکستان فلور ملز ایسوسی ایشن کے چیئرمین چوہدری ناصرعبداللہ نے بدھ کو پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہی ۔انہوں نے کہا کہ دو ہزار تیرہ کے بعد ایک بار پھر رمضان آٹا پیکیج متعارف کرانے کی بازگشت ہے جسے فلور ملز ایسوسی ایشن مسترد کرتی ہے ، رمضان آٹا پیکیج کرپشن کی بہتی گنگا میں ہاتھ دھونے میں چند فلور ملز مالکان بھی ملوث ہیں،پیکیج کے نام پر سرکاری حکام ،مخصوص دکان دار اور سپلائی چین فائدہ اٹھاتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ایک با ر پھر ماہ رمضان میں 2 سے 3لاکھ ٹن گندم کیلئے دو سے تین ارب روپے سببسڈی کیلئے رقم مختص کی جارہی ہے ،اس پیکیج کی آڑ میں کرپشن کا بازار گرم ہو گا اور قومی خزانے سے 3ارب روپے کی رقم مفاد پرست عناصر کی جیبوں میں چلی جائے گی۔