درآمداتی تجارتی ٹیرف میں اضافہ چینی صنعتکاروں نے وزیراعظم سے شکایت کردی


چینی صنعتکاروں نے ڈائریکٹوریٹ آف ایولوشن کی جانب سے درآمدی تجارتی ٹیرف میں غیر منصفانہ اضافے کے خلاف وزیر اعظم پاکستان سے تحریری طور پرشکایت کر دی ہے ۔ذرائع نے بتایا کہ چین کے صوبے شیڈونگ میں لکڑی کے شعبے سے وابستہ معروف کمپنی نے غیر منصفانہ درآمدی تجارتی ٹیرف عائد کیے جانے کے خلاف وزیر اعظم پاکستان میاں نواز شریف سے خط کے ذریعے شکایت کی جس میں کہاگیا ہے کہ ہماری چینی مصنوعات میلامائنMDF ڈور اسکن کی درآمدات کی درست ویلیونہیں لگائی جا رہی ،گزشتہ 2 ماہ کے دوران اس پروڈکٹ کی تجارتی قیمت 50سے 75فیصد تک بڑھی جو بلا جواز ہے ،ڈائریکٹوریٹ آف ایولوشن کے اس اقدام کے باعث نہ صرف چینی بلکہ پاکستانی درآمد کنندگان اور اس شعبے سے وابستہ تاجرو ں کو بھی مشکلات کا سامنا ہے ۔ذمہ دار ذرائع کا کہنا ہے کہ چین میں لکڑی کے شعبے سے وابستہ معروف کمپنی Tayed Woodکی سیلز منیجریو یو نے وزیر اعظم کو لکھے گئے خط میں کہا ہے کہ پاکستان اور چین کے درمیان دوستی کی ایک طویل تاریخ ہے ، امید کی جاتی ہے کہ پاک چین اقتصادی راہداری بھی پاکستان کی معاشی اور اقتصادی ترقی میں معاون ثابت ہو گا تاہم چینی مینوفیکچررز اور برآمد کنندگان پاکستان کے درآمدی تجارتی ٹیرف میں بلاجواز اضافے پر تشویش میں مبتلا ہیں ۔خط میں کہا گیا ہے کہ وزیراعظم درآمدی تجارتی ٹیرف میں غیر منصفانہ اضافے کا نوٹس لیں اور اس معاملے کی تحقیقات کر کے اس مسئلے کو حل کرنے میں مدد بھی کریں تب ہی دونوں ممالک کے تاجر ایک دوسرے کیساتھ تجارتی تعلقات کو مزید مضبوط بنا سکتے ہیں ۔ذرائع نے بتا یا کہ چینی صوبے شیڈونگ میں واقع لکڑی کی معروف کمپنی نے وزیر اعظم پاکستان کو لکھے جانیوالے خط کی کاپی چین کے اسٹیٹ کونسل اوروزیر خزانہ اسحاق ڈار کو بھی ارسال کی ہے ۔